Urdu Poetry Whatsapp Status

Whatsapp Status in Urdu

Urdu Poetry Whatsapp Status is much common in Pakistan and India. Urdu is language of sweetness and people having emotions like to express their feelings in Urdu. In simple words, we can say that Urdu poetry provides oxygen to love birds.

When we talk about Whatsapp Status in Urdu, Urdu poetry and Urdu quotes are most populor. So we have given famous Faiz Ahmad Faiz poetry. These two Ghazals of Faiz are our special prezentation for Urdu poetry Whatsapp Status. This Urdu shayri is in Urdu, roman Urdu and also in form of designing.

A video based on Urdu poetry is uploaded indeed. This is poetry of Faiz Ahmad Faiz. You can download this video by clincking on our link to use it as Whatsapp status video.

غزل فیض احمد فیض

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

donoñ jahān terī mohabbat meñ haar ke

vo rahā hai koī shab-e-ġham guzār ke

فیض احمد فیض
ویراں ہے مے کدہ خم و ساغر اداس ہیں
تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے

vīrāñ hai mai-kada ḳhum-o-sāġhar udaas haiñ

tum kyā ga.e ki ruuTh ga.e din bahār ke

faiz poetry

اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن
دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

ik fursat-e-gunāh milī vo bhī chaar din

dekhe haiñ ham ne hausle parvardigār ke

urdu shayri

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے

duniyā ne terī yaad se begāna kar diyā

tujh se bhī dil-fareb haiñ ġham rozgār ke

poetry in urdu

بھولے سے مسکرا تو دیے تھے وہ آج فیضؔ
مت پوچھ ولولے دل ناکردہ کار کے

bhūle se muskurā to diye the vo aaj ‘faiz’

mat pūchh valvale dil-e-nā-kardā-kār ke

urdu poetry status

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

Whsatsapp Status Video, Urdu Poetry


Download video

فیض احمد فیض کے مقبول عام اشعار

بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے
تم اچھے مسیحا ہو شفا کیوں نہیں دیتے

مِٹ‌ جائے گی مخلوق تو انصاف کرو گے
منصف ہو تو اب حشر اُٹھا کیوں‌ نہیں‌ دیتے

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہربان
بھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

ان میں لہو جلا ہو ہمارا کہ جان و دل
محفل میں کچھ چراغ فروزاں ہوئے تو ہیں

اٹھ کر تو آ گئے ہیں تری بزم سے مگر
کچھ دل ہی جانتا ہے کہ کس دل سے آئے ہیں

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں
کسی بہانے تمہیں یاد کرنے لگتے ہیں

جب تجھے یاد کر لیا صبح مہک مہک اٹھی
جب ترا غم جگا لیا رات مچل مچل گئی

جدا تھے ہم تو میسر تھیں قربتیں کتنی
بہم ہوئے تو پڑی ہیں جدائیاں کیا کیا

فیض بذبان فیض

Download video

Faiz Poetry in Roman Urud

dil meñ ab yuuñ tire bhūle hue ġham aate haiñ

jaise bichhḌe hue kaabe meñ sanam aate haiñ

tum aa.e ho na shab-e-intizār guzrī hai

talāsh meñ hai sahar baar baar guzrī hai

chaman pe ġhārat-e-gul-chīñ se jaane kyā guzrī

qafas se aaj sabā be-qarār guzrī hai

hamīñ se apnī navā ham-kalām hotī rahī

ye teġh apne lahū meñ niyām hotī rahī

jo kuchh bhī ban na paḌā ‘faiz’ luT ke yāroñ se

to rahzanoñ se duā-o-salām hotī rahī

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *